0

Nawaz Sharif canceled a Friday holiday and Friday, ???

23 فروری 1997

نواز شریف نے 1977 سے دی جانے والی جمعہ المبارک کی چھٹی 20 سال بعد ختم کر دی ۔اس فیصلے کے ٹھیک 20 سال بعد 23 فروری 2017 کو پاکستان کی سپریم کورٹ نے پانامہ کیس کی سماعت مکمل کرکے وہ تاریخی فیصلہ محفوظ کیا تھا جس کے پہلے حصے میں پاکستان مسلم لیگ ن نے 20 اپریل 2017 کو مٹھائیاں کھائیں تھیں کیونکہ اس روز جمعرات کا دن تھا لیکن صرف 3 ماہ بعد 28 جولائی 2017 کو جمعہ المبارک کا دن پاکستان مسلم لیگ ن کے لیے روز قیامت تھا جب 3 مرتبہ کے وزیر اعظم پاکستان نواز شریف تاحیات نااہل قرار دے دیئے گئے تھے۔

پاکستان ﭘﯿﭙﻠﺰﭘﺎﺭﭨﯽ ﮐﮯ ﺑﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﺑﻖ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﺫﻭﺍﻟﻔﻘﺎﺭ ﻋﻠﯽ ﺑﮭﭩﻮ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺭِ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﻌﮯ ﮐﮯ ﺭﻭﺯ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﺗﻌﻄﯿﻞ ﮐﺎ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ ﻧﮯ اپنے دوسرے وزارت عظمیٰ کے دور میں 23 فروری 1997 کو ﺟﻤﻌﮯ ﮐﯽ ﺗﻌﻄﯿﻞ ﺧﺘﻢ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﺗﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﺭﻭﺯ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﭼﮭﭩﯽ ﮐﺎ ﺍﻋﻼﻥ ﮐﯿﺎ۔

جمعہ کا روز ویسے تو مسلمانوں کے لئے یوم عید ہے لیکن پاکستان مسلم لیگ ن کے لئے یوم وعید بن گیا ۔

پاکستان کی ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻣﯿﮟ ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﺍٓﻑ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﺎﺗﺤﺖ ﻋﺪﺍﻟﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯﺟﻤﻌﮯﮐﮯ رﻭﺯ ﺑﮍﮮ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﺳﻨﺎﺋﮯ ﮔﺌﮯ ﺍٓﺋﯿﮯ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﻣﺨﺘﺼﺮ ﻧﻈﺮ ﮈﺍﻟﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔

20 ﺟﻮﻻﺋﯽ 2007
بروز جمعہ المبارک۔
ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﮐﮯ ﺗﯿﻦ ﺭﮐﻨﯽ ﺑﯿﻨﭻ ﻧﮯ ﺳﺎﺑﻖ ﺻﺪﺭ ﺟﻨﺮﻝ ‏( ﺭ ‏) ﭘﺮﻭﯾﺰ ﻣﺸﺮﻑ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﺍﻓﺘﺨﺎﺭ ﭼﻮﮨﺪﺭﯼ ﮐﻮ ﺑﻄﻮﺭ ﭼﯿﻒ ﺟﺴﭩﺲ ﻋﮩﺪﮮ ﺳﮯ ﮨﭩﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﮐﻮ ﮐﺎﻟﻌﺪﻡ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻋﺪﺍﻟﺖِ ﻋﻈﻤﯽٰ ﮐﺎ ﺳﺮﺑﺮﺍﮦ ﻣﻘﺮﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺍﺣﮑﺎﻣﺎﺕ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﯿﮯ۔

31 ﺟﻮﻻﺋﯽ 2009
بروز جمعہ المبارک
ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﺍٓﻑ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻧﮯ ﺳﺎﺑﻖ ﺍٓﺭﻣﯽ ﭼﯿﻒ ﺟﻨﺮﻝ ‏( ﺭ ‏) ﭘﺮﻭﯾﺰ ﻣﺸﺮﻑ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ 3 ﻧﻮﻣﺒﺮ 2007 ﮐﻮ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺎﺭﺷﻞ ﻻﺀ ﮐﻮ ﻏﯿﺮ ﺍٓﺋﯿﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﻗﺎﻧﻮﻧﯽ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺳﺎﺑﻖ ﺻﺪﺭ ﮐﻮ ﻣﻠﺰﻡ ﻧﺎﻣﺰﺩ ﮐﯿﺎ۔

28 ﺟﻮﻻﺋﯽ 2017
بروز جمعہ المبارک

ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﺍٓﻑ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﻧﭻ ﺭﮐﻨﯽ ﺑﯿﻨﭻ ﻧﮯ ﭘﺎﻧﺎﻣﺎﮐﯿﺲ ﮐﺎ ﺗﺎﺭﯾﺨﯽ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺑﮭﯽ ﺟﻤﻌﮯ ﮐﮯ ﺭﻭﺯ ﺳﻨﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ ﮐﻮ ﺑﻄﻮﺭ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﻋﮩﺪﮮ ﺳﮯ ﮨﭩﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻋﻮﺍﻣﯽ ﻋﮩﺪﮦ ﭘﺮ ﻧﺎﺍﮨﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺍﺣﮑﺎﻣﺎﺕ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﯿﮯ۔

15 ﺩﺳﻤﺒﺮ 2017
بروز جمعہ المبارک
ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﻣﯿﮟ ﺟﺴﭩﺲ ﻣﺸﯿﺮﻋﺎﻟﻢ ﮐﯽ ﺳﺮﺑﺮﺍﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﻦ ﺭﮐﻨﯽ ﺑﯿﻨﭻ ﻧﮯ ﺣﺪﯾﺒﯿﮧ ﭘﯿﭙﺮﻣﻠﺰﮐﯿﺲ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﮐﮭﻮﻟﻨﮯ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺩﺍﺋﺮﮐﯽ ﺳﻤﺎﻋﺖ ﮐﯽ، ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﮐﮯ3رﮐﻨﯽ ﺑﯿﻨﭻ ﻧﮯﻣﺨﺘﺼﺮ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺳﻨﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻧﯿﺐ ﮐﯽ ﺍﭘﯿﻞ ﻣﺴﺘﺮﺩ ﮐﺮﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻋﺪﺍﻟﺖ ﻧﯿﺐ ﮐﮯﺩﻻﺋﻞ ﺳﮯﻣﻄﻤﺌﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ﺟﺒﮑﮧ ﺩﺭﺧﻮﺍﺳﺖ ﻣﺴﺘﺮﺩ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺗﺤﺮﯾﺮﯼ ﻓﯿﺼﻠﮯﻣﯿﮟ ﺑﺘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺋﮯﮔﯽ۔

15 ﺩﺳﻤﺒﺮ 2017
بروز جمعہ المبارک
ﺟﻤﻌﮯ ﮐﮯ ﺭﻭﺯ ﮨﯽ ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﻧﮯ ﻣﺴﻠﻢ ﻟﯿﮓ ﻥ ﮐﮯ ﺭﮨﻨﻤﺎﺀ ﺣﻨﯿﻒ ﻋﺒﺎﺳﯽ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﺳﮯ ﺩﺍﺋﺮ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺟﮩﺎﻧﮕﯿﺮ ﺗﺮﯾﻦ ﮐﯽ ﻧﺎﺍﮨﻠﯽ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺩﺍﺋﺮ ﺩﺭﺧﻮﺍﺳﺖ ﭘﺮ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺳﻨﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺟﮩﺎﻧﮕﯿﺮ ﺗﺮﯾﻦ ﮐﻮ ﺍﺛﺎﺛﮯ ﻇﺎﮨﺮ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﻋﻮﺍﻣﯽ ﻋﮩﺪﮮ ﺳﮯ ﻧﺎﺍﮨﻞ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ۔

13 ﺍﭘﺮﯾﻞ 2018
بروز جمعہ المبارک
ﺳﭙﺮﯾﻢ ﮐﻮﺭﭦ ﺍٓﻑ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﻧﮯ 13 ﺍﭘﺮﯾﻞ ﺑﺮﻭﺯ ﺟﻤﻌﮯ ﮐﮯ ﺭﻭﺯ ﺍٓﺋﯿﻦ ﮐﮯ ﺍٓﺭﭨﯿﮑﻞ 62 ‏(1) ﺍﯾﻒ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻧﻮﺍﺯﺷﺮﯾﻒ ﺍﻭﺭ ﺟﮩﺎﻧﮕﯿﺮ ﺗﺮﯾﻦ ﮐﻮ ﺗﺎﺣﯿﺎﺕ ﻋﻮﺍﻣﯽ ﻋﮩﺪﮮ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻧﺎﺍﮨﻞ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ، ﻋﺪﺍﻟﺘﯽ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ جب تک عدالتی فیصلہ برقرار رہے گا، نااہلی بھی برقرار رہے گی۔

06 ﺟﻮﻻﺋﯽ 2018
بروز جمعہ المبارک
ﻗﻮﻣﯽ ﺍﺣﺘﺴﺎﺏ ﺑﯿﻮﺭﻭ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺭﯼ ﺍﯾﻮﻥ ﻓﯿﻠﮉﺭ ﺭﯾﻔﺮﻧﺲ ﮐﺎ احتساب عدالت نے ﺗﻔﺼﯿﻠﯽ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﯿﺎﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﻮﺍﺯ ﺷﺮﯾﻒ ﮐﻮ 10 ﺳﺎﻝ ، ﻣﺮﯾﻢ ﻧﻮﺍﺯ ﮐﻮ 7 ﺍﻭﺭ ﮐﭙﯿﭩﻦ ﺻﻔﺪﺭ ﮐﻮ 1 ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﺳﺰﺍ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺟﺒﮑﮧ ﺳﺎﺑﻖ ﻧﺎﺍﮨﻞ ﻭﺯﯾﺮﺍﻋﻈﻢ ﮐﻮ ﭘﺮ 80 ﻻﮐﮫ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﯾﻢ ﻧﻮﺍﺯ ﮐﻮ 20 ﻻﮐﮫ ﭘﺎﺅﻧﮉ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺣﮑﻢ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﯿﺎ۔See Translation


اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں